Home / Ahadith-e-Mubarka / Narrated Anas bin Malik (رضی اللہ تعالیٰ عنہ): A funeral procession passed and the people praised the deceased

Narrated Anas bin Malik (رضی اللہ تعالیٰ عنہ): A funeral procession passed and the people praised the deceased

خيرا فقال النبي صلی الله عليه وسلم وجبت ثم مروا بأخری فأثنوا عليها شرا فقال وجبت فقال عمر بن الخطاب رضي الله عنه ما وجبت قال هذا أثنيتم عليه خيرا فوجبت له الجنة وهذا أثنيتم عليه شرا فوجبت له النار أنتم شهدائ الله في الأرض

آدم، شعبہ، عبدالعزیز بن صہیب، انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے روایت کرتے ہیں ان کو کہتے ہوئے سنا کہ لوگ ایک جنازے کے پاس سے گزرے تو اس کو ذکر خیر کیا تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا واجب ہوگئی پھر ایک دوسرے جنازے کے پاس سے گزرے تو اس کا برے طور پر ذکر کیا تو آپ نے فرمایا کہ واجب ہوگئی، عمر ابن خطاب نے فرمایا کہ کیا چیز واجب ہوگئی ؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا جس شخص کی تم لوگوں نے تعریف کی اس کے لئے جنت واجب ہوگئی اور جس کو برے طور پر ذکر کیا اس کے لئے جہنم واجب ہوگئی تم لوگ زمین پر اللہ کے گواہ ہو۔

Narrated Anas bin Malik (رضی اللہ تعالیٰ عنہ): A funeral procession passed and the people praised the deceased. The Prophet (اللہ صلی اللہ علیہ وسلم) said, It has been affirmed to him.” Then another funeral procession passed and the people spoke badly of the deceased. The Prophet (اللہ صلی اللہ علیہ وسلم) said, “It has been affirmed to him”. ‘Umar bin Al-Khattab (رضی اللہ تعالیٰ عنہ) asked (ALLAH’s Apostle (اللہ صلی اللہ علیہ وسلم)), “What has been affirmed?” He replied, “You praised this, so Paradise has been affirmed to him; and you spoke badly of this, so Hell has been affirmed to him. You people are ALLAH’s witnesses on earth.

صحیح بخاری:جلد اول:حدیث نمبر 1291 حدیث متواتر حدیث مرفوع مکررات 11 متفق علیہ 6

Comments

comments

About Fiaz Ahmed

Leave a Reply