Home / Ahadith-e-Mubarka / ALLAH’s Messenger (صلى الله عليه وآله وسلم) said: When a bondsman-a Muslim or a believer-washes his face

ALLAH’s Messenger (صلى الله عليه وآله وسلم) said: When a bondsman-a Muslim or a believer-washes his face

حدثنا سويد بن سعيد عن مالک بن أنس ح و حدثنا أبو الطاهر واللفظ له أخبرنا عبد الله بن وهب عن مالک بن أنس عن سهيل بن أبي صالح عن أبيه عن أبي هريرة أن رسول الله صلی الله عليه وسلم قال إذا توضأ العبد المسلم أو المؤمن فغسل وجهه خرج من وجهه کل خطية نظر إليها بعينيه مع الما أو مع آخر قطر الما فإذا غسل يديه خرج من يديه کل خطية کان بطشتها يداه مع الما أو مع آخر قطر الما فإذا غسل رجليه خرجت کل خطية مشتها رجلاه مع الما أو مع آخر قطر الما حتی يخرج نقيا من الذنوب

سوید بن سعید، مالک بن انس، ابوطاہر، عبداللہ بن وہب، مالک بن انس، سہیل بن ابی صالح، ابوہریرہ رضی اللہ عنہ روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا کہ جب بندہ مسلمان یا مومن وضو کرتا ہے اور اپنے چہرے کو دھوتا ہے تو اس کے چہرے سے وہ تمام گناہ جھڑ جاتے ہیں جو اس نے آنکھوں سے کئے پانی کے ساتھ یا پانی کے آخری قطرے کے ساتھ، جب وہ اپنے دونوں ہاتھ دھوتا ہے تو اس کے ہاتھوں کے گناہ جو انہوں نے کسی چیز کو پکڑ کر کئے جھڑ جاتے ہیں پانی کے ساتھ یا پانی کے آخری قطرے کے ساتھ، جب وہ اپنے پاؤں کو دھوتا ہے تو پاؤں جن گناہوں کی طرف چل کر گئے وہ تمام گناہ پانی کے ساتھ یا پانی کے آخری قطرے کے ساتھ نکل جاتے ہیں یہاں تک کہ وہ گناہوں سے پاک وصاف ہو کر نکلتا ہے۔

Abu Huraira reported: ALLAH’s Messenger (صلى الله عليه وآله وسلم) said: When a bondsman-a Muslim or a believer-washes his face (in course of ablution), every sin he contemplated with his eyes, will be washed away from his face along with water, or with the last drop of water; when he washes his hands, every sin they wrought will be effaced from his hands with the water, or with the last drop of water; and when he washes his feet, every sin towards which his feet have walked will be washed away with the water or with the last drop of water with the result that he comes out pure from all sins

صحیح مسلم:جلد اول:حدیث نمبر 577 حدیث مرفوع مکررات 22 متفق علیہ 7

Comments

comments

About Fiaz Ahmed

Leave a Reply